سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

ایس ای سی پی کی مکمل خود مختاری یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ۱۹۹۷کا  ایکٹ سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ (پالیسی بورڈ ) بھی قائم کرتا ہے۔ پالیسی بورڈ کا بنیادی مقصد ایس ای سی پی کے کارہائے منصبی سے متعلقہ تمام معاملات میں  اس کی راہنمائی  کرنا اور  اس کی  کی مشاورت سے پالیسیاں مرتب کرنا ہے۔پالیسی بورڈایکٹ کے دائرہ کار میں آنے والے معاملات اوردیگر کارپوریٹ قوانین کے حوالے سے  حکومت کو مشاورت فراہم کرنے  کا بھی  ذمہ دار ہے؛اور حکومت یا  ایس ای سی پی کی جانب سے اسے بھجوائے گئے  پالیسی معاملات پر اپنی رائے دینے کا بھی ذمہ دار ہے۔

ایکٹ کے مطابق‘پالیسی بورڈ وفاقی حکومت کے تقرر کردہ  زیادہ سے زیادہ گیارہ اراکین پر مشتمل ہو گا ‘جن میں سے پانچ سرکاری جب کہ چھ نجی شعبہ سے ہوںگے

فی الوقت پالیسی بورڈ کی تشکیل حسبِ ذیل ہے :

سرکاری شعبہ سے اراکین

محترم طارق باجوہ

چیئرمین ‘سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

سیکریٹری خزانہ

محترم محمد ظفرالحق حجازی

رکن، سکیورٹیز اینڈ ایکسچینجج پالیسی بورڈ

چیئرمین‘ سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان

محترم محمد یونس ڈاگھا

رکن، سکیورٹیز اینڈ ایکسچینجج پالیسی بورڈ

سیکریٹری کامرس

محترم کرامت حسین نیازی

رکن، سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

سیکریٹری ‘ لاء اینڈ جسٹس

محترم جمیل احمد

رکن‘سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

ڈپٹی گورنر ‘ سٹیٹ بینک آف پاکستان

نجی شعبے سے  اراکین

محترم حافظ محمد یوسف

رکن‘سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

محترم کمال حسن صدیقی

رکن‘سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

سینٹر عثمان سیف اللہ خان

رکن‘سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

محترم ابراہیم سادات

رکن‘سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ

محترم جاوید اسلم کالیا

رکن، سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج پالیسی بورڈ